کیا مردوں کے حقوق نہیں ہوتے ؟

میں اپنے کمرے میں اپنا لیپ ٹاپ استعمال کررہا تھا کہ دروازے پر دستک ہوئی۔ میں نے دروازہ کھولا تو آگے میری دوست کھڑی تھی دروازہ کھلتے ہی وہ اندر آگئ اور کہنے لگی

شدید گرمی تھی اور اے ٹی ایم سے پیسے نکلوانے والوں کی لائین لگی ہوئی تھی۔ تمام مرد حضرات تھے اور ایسے میں جب میں اے ٹی ایم کے پاس پہنچی تو وہاں موجود حضرات کی غیرت نے ایک بیٹی کو گرمی میں کھڑا دیکھنا گوارا نہ سمجھا اور میں لائین کے آخر میں ہوتے ہوۓ بھی ان سب سےپہلے فارغ ہو گئ۔

دوسری بار یوں ہوا کہ ﺑﺲ ﺳﭩﺎﭖ ﭘﺮ ﮐﺎﻓﯽ ﻣﺮﺩ ﮔﺎﮌﯼ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ . ﮨﺮ ﺍﮎ ﮐﻮ ﺟﻠﺪﯼ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻮﺳﻢ ﮐﯽ ﺷﺪﺕ ﺳﮯ ﺑﯿﺰﺍﺭﯼ ﺑﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﻭﮨﺎﮞ ﭘﮩﻨﭽﯽ . ﮔﺎﮌﯼ ﺗﻮ ﺳﭩﺎﭖ ﭘﺮ ﺁﮔﺌﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺳﯿﭧ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﯾﻮﮞ ﻭﮨﺎﮞ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻣﺮﺩ ﺣﻀﺮﺍﺕ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﺎ ﭘﺎﺱ ﺭﮐﮫ ﻟﯿﺎ۔

ﺁﻓﺲ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﮐﻠﺮﮐﺲ ﻧﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺮﺩ ﺣﻀﺮﺍﺕ ﮐﮯﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﯿﮟ ﭘﮩﻠﮯ ﻓﺎﺭﻍ ﮐﯿﺎ۔

17201272_1253025224786885_6158302651553314991_n

ﻓﯿﺲ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﺍﻧﮯ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﺑﯿﻨﮏ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻣﺮﺩﻭﮞ ﮐﯽ ﻟﻤﺒﯽ ﻻﺋﯿﻦ ﺗﮭﯽ ﭘﺮ ہر ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﺳﮯ ﺑﮯ ﭼﯿﻦ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺠﮭﮯ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺁﮔﮯ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔
میں اس کی باتیں کافی غور سے سن رہا تھاوہ کافی غصۓ میں تھی اور کہتی چلی گئ کہ ﻧﺠﺎﻧﮯ ﮨﻢ ﯾﮧ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﮔﺎﮌﯼ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﯽ ﺳﯿﭧ ﮨﻢ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﻮ ﻣﻠﺘﯽ ﮨﮯ . ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﻣﺮﺩ ﮨﻤﯿﮟ ﮨﺮ ﮔﺮﻡ ﻭ ﺳﺮﺩ ﮨﻮﺍ ﺳﮯ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ . ﮐﺎﻟﺞ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ، ﺷﺎﭘﻨﮓ ﺳﯿﻨﭩﺮ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺗﻔﺮﯾﺤﯽ ﻣﻘﺎﻡ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﺮ ﻣﺮﺩﻭﮞ ﮐﻮ ﻣﺤﺘﺮﻡ ﮨﯽ ﭘﺎﯾﺎ . ﻋﺰﺕ ﮨﯽ ﻭﺻﻮﻝ ﮐﯽ . ﮨﺎﮞ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺳﮑﮯ ﺑﺮﻋﮑﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻧﮑﯽ ﺑﮯﻋﺰﺗﯽ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻮﻗﻌﮧ ﮨﺎﺗھ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﻧﮧ ﺩﯾﺎ . ﺍﻧﮑﯽ ﮨﺮ ﺳﻮﭺ ﮐﻮ ﻏﻠﻂ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﺮ ﻧﮧ ﮐﯽ . ﺍﻧﮑﻮ ﺟﺎﺑﺮ ﻇﺎﻟﻢ ﺍﻭﺭ ﻧﮩﺎﮨﺖ ﮨﯽ ﻓﻀﻮﻝ ﺍﻟﻘﺎﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﻧﻮﺍﺯﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻋﺎﺭ ﻣﻤﺤﺴﻮﺱ ﻧﮧ ﮐﯿﺎ . ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ہمیشہ ﭨﮭﯿﮏ ﺍﻭﺭ ﻣﻈﻠﻮﻡ ﺟﺒﮑﮧ ﺍﺳﮯ ﻇﺎﻟﻢ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﺍ ﺗﺼﻮﺭ ﮐﯿﺎ . ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﯾﮧ ﺷﮑﻮﮦ ﺑﮭﯽ ﻟﯿﮯ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﺭﮨﯽ ﮐﮧ ﻣﺮﺩ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﯽ ﻋﺰﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ . ﻣﺠﮭﮯ ﮐﻮﻥ ﺳﻤﺠﮭﺎﺗﺎ ﮐﮧ ﻋﺰﺕ ﮐﺮﻭﺍﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﻋﺰﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺑﮩﺖ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻣﺮﺩ ﮨﻮ ﯾﺎ ﻋﻮﺭﺕ ، ﻋﺰﺕ ﮐﯽ ﺑﮭﻮﮎ ﺳﺐ ﮐﻮ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯ . ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﺮﺩﻭﮞ ﮐﻮ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﮐﺎ ﻣﻌﺎﻭﺿﮧ ﮨﯽ ﻋﺰﺕ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ . ﻧﺠﺎﻧﮯ ﻭﮦ ﮐﻮﻧﺴﯽ NGO’s ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺣﻘﻮﻕ ﻣﺮﺩﺍﮞ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﻮﮞ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﺎ ﺍﺻﻞ ﺑﻮﺟﮫ ﺗﻮ ﺍﻧﮑﮯ ﮨﯽ ﮐﻨﺪﮬﻮﮞ ﭘﺮ ﮨﮯ . ﯾﮧ ﺳﭻ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﭼﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﮮ ﻣﺮﺩ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺑﻠﮑﻞ ﻭﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﭼﮭﯽ ﺑﺮﯼ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﺟﻮ ﮨﻢ ﺑﮯ ﻋﺰﺗﯽ ﮐﮧ ﭘﻠﮍﮮ ﻣﯿﮟ ﺳﺒﮑﻮ ﮈﺍﻝ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻧﺎ ﺍﺻﻞ ﺑﮯ ﻋﺰﺗﯽ ﯾﮩﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﺩ ﮐﻮ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﯽ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ میں نے اس کی بات سے اتفاق کیا

:اور پھر وہ اللہ سے دعاگو ہوئی اور کہنے لگی

یا اللہ ان سب کو سمجھا کہ ﻋﺰﺕ ﻟﯿﻨﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﻋﺰﺕ ﺩﯾﻨﺎ ﺳﯿﮑﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺭﺩﮔﺮﺩ ﭘﮭﯿﻠﯽ ﺍﭼﮭﺎﺋﯿﺎﮞ ﺗﻼﺵ ﮐﺮﯾﮟ ﺑﺮﺍﺋﯿﺎﮞ ﺧﻮﺩ ﮨﯽ ﺩﺏ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﯽ

مجھے اپنے کسی کام سے جانا تھا تو اس کو میں نے خدا حافظ بولا اور اپنے کام کو نکل پڑا میں سارا راستہ یہی سوچتا رہا کہ کیا ہم  مردوں کے حقوق نہیں ہوتے؟

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s